لاگ ان
Login
 ای میل
پاس ورڈ
 
Disclamier


شکست سے کوئی سبق سیکھے گا؟ Share
……سید شہزاد عالم……
لندن اولمپکس میں آسٹریلیا کے ہاتھوں پاکستان کی عبرتناک شکست کے بعد پاکستانی ہاکی ٹیم نہ صرف میڈل کی دوڑ سے باہر ہو گئی بلکہ کسی بھی کھیل میں میڈل حاصل کرنے کی امیدیں بھی دم توڑ گئیں۔ اب ہاکی میں ساتویں یا آٹھویں پوزیشن ہی مقدر ہے۔ آسٹریلیا سے میچ جیتنے کی صورت میں سیمی فائنل کا ٹکٹ کنفرم ہو جاتا لیکن اس اہم ترین میچ میں ٹیم کی کارکردگی ایسی تھی جیسے انہیں سیمی فائنل کھیلنے سے کوئی دلچسپی نہ ہو۔ درحقیقت آسٹریلیا نے ہاکی کے میچ میں پاکستانی ٹیم کو ٹینس کا مزا چکھادیا۔ سات گو ل سے شکست اس سے پہلے کبھی نہ کھائی تھی۔ہاکی کے علاوہ دیگر کھیلوں میں بھی کھلاڑی ابتدائی راؤنڈ میں ہی شکست کھا کر مقابلوں سے باہر ہوتے رہے۔لندن اولمپکس ہم پاکستانیوں کے لئے انتہائی مایوس کن ثابت ہوئے۔ لیکن سچی بات تو یہ ہے جو بویا جاتا ہے، وہی کاٹا جاتا ہے۔پاکستان میں کھیلوں اور کھلاڑیوں کے ساتھ جو سلوک کیا جاتا ہے اس کے بعد یہی دن دیکھنے کو ملتا ہے۔ کھیلوں کی مینجمنٹ میں ایک سے بڑھ کے ایک نالائق بیٹھا ہے جس کی قابلیت محض سیاسی وابستگی یا کسی طاقتور شخص سے قرابت داری ہوتی ہے۔ اسپورٹس کے فنڈز کرپشن کی نذر ہو جاتے ہیں۔ نااہل انتظامیہ کو متعلقہ کھیل کی ابجد کا بھی پتہ نہیں ہوتا۔ قومی اور صوبائی سطح کے کھیلوں میں بد انتظامی اور افراتفری عروج پر ہوتی ہے۔ کھلاڑیوں کا انتخاب میرٹ کے بجائے سفارش اور پیسے کی بنیاد پر ہوتا ہے۔ کھیلوں کے ذمہ داران ملک میں کھیلوں کے فروغ کے بجائے اس کی بربادی کا ساماں زیادہ کرتے ہیں۔ ملک میں مختلف کھیلوں میں جو بھی ٹیلنٹ سامنے آتا ہے وہ زیادہ تر خداداد ہوتا ہے، ذمہ داران کا اس میں کوئی کمال نہیں ہوتا ہے۔ ہونا تو یہ چاہئے کہ کسی کھیل میں ابتدائی ٹیلنٹ سامنے آنے کے بعد اس کھلاڑی کو اعلیٰ تربیت دلائی جائے، بیرون ملک تربیت کے لئے بھیجا جائے اور اس کی گرومنگ کی ہر ممکن کوشش کی جائے تاکہ وہ کھلاڑی بین الاقوامی معیار سے روشناس ہو، اور کسی بھی انٹر نیشنل ٹورنامنٹ میں بہترین کارکردگی دکھانے کے قابل ہو، لیکن ہوتا اس کے با لکل بر عکس ہے۔ ٹیلنٹ کی ہر ممکن حوصلہ شکنی کی جاتی ہے۔ اہل کھلاڑیوں کے بجائے سفارشی کھلاڑی ملک کی نمائندگی کرتے ہیں جن کی ناقص کارکردگی قوم کی بدنامی کا سبب بنتی ہے۔ دنیا کی دیگر اقوام کھیلوں میں اپنا معیار بلند سے بلند تر کر رہی ہیں۔ ان کے اور ہمارے کھلاڑیوں میں زمین و آسمان کا فرق ہے۔ ان کی عمومی جسمانی صحت، کھیل میں پختگی ، پیشہ ورانہ ذمہ داری کا مظاہرہ اور ان کے پیچھے مضبوط مینجمنٹ کا وجود ہمارے لئے سیکھنے کا سبق ہے۔ بحیثیت قوم ہم آج کھیلوں سمیت اپنا کوئی بھی شعبہ صحیح سے چلانے کے قابل نہیں رہے۔ ہم میں اور دیگر اقوام کے درمیان فرق گہرے سے گہرا ہوتا جارہا ہے۔ لندن اولمپکس کے نتائج میں کیا ہمارے لئے کوئی سبق ہے یا حسب دستور ہم ساری ذمہ داری بدقسمتی پر ڈال کر ریت میں سر دبا کر کسی اگلے مقابلوں میں شکست کی تیاریوں میں مصروف ہو جائیں گے۔۔۔۔؟
shahzad.janggroup@gmail.com  
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 39 ) احباب کو بھیجئے
 
  ShareThis

   تبصرہ کریں  
  آپ کا نام
  ای میل ایڈریس
شھر کا نام
ملک
  تبصرہ
کوڈ ڈالیں 
  Urdu Keyboard


Bilal Saif Chatha, Lahore..........himmat nahein harni chahiya phir acchi tayyari kay sath maidaan mein utrain, inshallah kaamyaab hongay..
 
bilal saif chatha Posted on: Friday, September 07, 2012


Zafar Hussain, Lahore..........Aslaam o Alaikum Ye jo matches Pakistan or kisi bhi mulk k darmian hoty hain, y kabhi bhi fair cricket nahi hoti. Wo dor guzar gay hamry players jitny k liy khalty thy. Ye sara muamily hamary board ky hath my chala gaya hy.Hamary yahan or dunia my jova itna rach bas gaya hy k koi bhi event ho us per jova lagna bohat hi aam hy. Or cricket to Pakistani qom ki pasndida sport hy.Hamara board Pakistani team ko us waqt lazmi harwa dyta hy jab Pakistani team ka rate bohat uper ho.
 
Zafar Hussain Posted on: Friday, September 07, 2012


محمد عثمان، سعودی عرب…اعمال کا دارو مدار نیت پر ہے آپ کھیل کی بات کرتے ہیں لیکن بندہ غریب یہ کہتا ہے کہ ہماری پوری قوم کرپشن، شفارش اور جرائم کی وجہ سے ناکام ہو چکی ہے ہر میدان اور ہر معاملے پر ہر جگہ ہم ذلیل ہو رہے ہیں، ہمارے پاس دنیا اور آخرت میں کامیاب اور عزت حاصل کرنے کا صرف ایک راستہ بچا ہے اور وہ ہے اللہ اور اس کے رسول کا راستہ، بد قسمتی سے ہم، ہماری عوام اور ہماری سیاسی پارٹیاں اپنانے کو تیار نہیں، جب تک ہم اللہ تعالیٰ اور اس کے پیارے حبیب کو راضی نہیں کر لیتے تب تک ہم عزت نہیں پا سکتے۔ اللہ پاک ہمیں راہ حق پر چلنے کی تو فیق دے۔ آمین
 
محمد عثمان Posted on: Thursday, September 06, 2012


Mohammad Aslam Hanif , Karachi.........pura mulk hi haar raha hai tau sirf hocky walo par ro kar kia faida, jab k us main players ka koi kasoor nahi.
 
Mohammad Aslam Hanif Posted on: Thursday, August 30, 2012


محمد کلیم فاروقی، شکاگو…سبق تو ہماری انڈر19 ٹیم نے سیکھ لیا ہے، ہاکی ٹیم کے نقش قدم پر چل رہی ہے، سفارش اور اقرباء پروری زندہ باد
 
محمد کليم فاروقي - شکا گو Posted on: Friday, August 24, 2012


محمد فواد بیگ، یو اے ای…میرے خیال میں اصل مسئلہ ہمارے کھلاڑیوں کا اسٹیمنا ہے، ہمیں اسٹیمنا بہتر بنانے پر توجہ دینی چاہئے۔
 
Muhammad Fawad Baig Posted on: Saturday, August 18, 2012


Syed Akber Hussain , Karachi.........Team m expertise tu hain unko aise coach ki zaroorat h jo unki mental tafness ki training ko focus kare..team asal m pressure m ajati h.. aur issi waja se hamein har field k kehl m isterha ka upset dekhne ko milta h...
 
Syed Akber Hussain Posted on: Friday, August 17, 2012


Usman Azhar, Spain............baat ye hai ke hmary team ko traning ki boohat zarurat hai is ki waja se sharamnaak shikast hui hame is shikast se kuch to seekhna chahiyee har dafa asisa hi hota hai hame is team ko achii tarah train karna chyee.
 
usman azhar Posted on: Wednesday, August 15, 2012


Muhammad Ejaz Khan, Azad Kashmir..........pakistani hockey team ko achhy terbiyat yafta coach ki zaroorat hey..
 
muhammad ejaz khan Posted on: Tuesday, August 14, 2012


Waqar Zaidi, Lahore.........merey khayal se pakistan team new hocky adopt kernay main nakaam rahi hai. pakistani old players are not a good coach. fitness 1 or important area hai. pakistani player thak jatay hain or phurti bhi kam hai jiska advantage doosri teams uthati hain verna pakistani team main telent bohat hai.is ka matlab hua achi coaching or training sab se important hai. doosri important baat demag istimal kernay ki bhi hai.clever stragy bhi missing thi.or goal keeper bhi na-ehel tha.
 
waqar zaidi Posted on: Monday, August 13, 2012


Afaq Ahmed Khan, Karachi........australia se match wale din mere remarks kuch yun thay"AAJ GHUBAARE MEIN SE HAWA NIKAL JAAYE GI".uski wajah team mein professionalism ki kami thi.england aur australia ke saath matches mein .confidence ki kami nazar ayi.hum se behtar tou wo ethopia ke players thay jo bhook o aflaas se hi sahi apne mulk ka naam tou roshan karne mein jaan lagate nazar aate thay.aisa lagta tha keh jis mulk ka jo haal hai uski team bhi waise hi perform kar rahi hai.apni hockey team mein se corruption tapak rahi thi.afsos sad afsos.
 
afaq ahmed khan Posted on: Monday, August 13, 2012


Muhammad Sarwar, Saudi Arabia..........oont rey oont teri koon ci kal sidhi, kis kis baat ka rona roya jaey, ab too bus intazaar hai keh kub hum pe koi azab-e-ilahi nazal ho or hum bahesiyat e qoom milya mait ho jaeen,.
 
Muhammad Sarwar Posted on: Monday, August 13, 2012


Muhammad Sarwar, Saudi Arabia...........Kis kis baat ka rona roya jaey jub ave ka ava hi bigra howa hai kaun sa kaam theek chal raha hai sub tabahi ki tarf gaamzen hai lekin hum kitne sakoon se ye sub apni ankhoon ke samne dekh rahey hain lekin tus se mus nahi hotey es sey ziyadha oor kiya behisi kisi qoom ki ho sakti hai danish ver cheekh chala rahey hain lekin koi kaan dherney wala nahi sub apney apney kaam main magan hain, saarey barey leader dhokey bazi ki zabaan bool rahey hain mazbi loggon ka too bera hi garaq hai wo qoom ko neend ki goliyaan khelane ke maher hain, Allah Allah khair salla.
 
Muhammad Sarwar Posted on: Monday, August 13, 2012


Shahnawaz Hussain, Azad Kashmir............Allah un ki madad krta hy jo apni madad ap krte hain.
 
Shahnawaz Hussain Posted on: Sunday, August 12, 2012


جوہر، سعودی عرب…میری رائے میں اتنے بڑے ایونٹ میں ٹیم بھیجنے سے پہلے اسکریننگ کا عمل ہوناچاہئے، کھلاڑیوں کی صلاحیت کو مکمل طورپر جانچنا چاہئے، آسٹریلیا کے خلاف شرمناک شکست کا مطلب ہے غلط مینجمنٹ اور غلط کھلاڑیوں کو انتخاب۔
 
jauhar Posted on: Sunday, August 12, 2012
Prev | 1 | 2 | 3 | Next
Page 1 of 3


سگریٹ نوشی سے انکار کا دن
تھر کا المیہ اورارباب اختیارکی غفلت‎
"دل ہے کہ مانتا نہیں...!"
متوان غذا صحت مند زندگی کی ضامن
شاہینوں کے بلے خوب گرجے، خوب برسے
 
انقلاب کا جھانسہ اورسادہ لوح عوام
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 36 )
انقلاب کا فرار
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 21 )
گورا رنگ ہی کیوں؟
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 19 )
"دل ہے کہ مانتا نہیں...!"
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 17 )
سراج الحق صاحب کی بھاگ دوڑ ۔۔۔ کھایا نا پیا گلاس توڑا بارہ آنے ۔۔
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 14 )
 
 
 
 
Disclamier
 
 
Disclamier
Jang Group of Newspapers
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this
web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited
Privacy Policy