لاگ ان
Login
 ای میل
پاس ورڈ
 
Disclamier


رمضان المبارک میں منافع خوری عروج پر! Share
……سید شہزاد عالم……
رمضان المبارک کی آمد کے ساتھ ہی مہنگائی کا طوفان برپا ہوگیا ہے جس کے سامنے غریب عوام بے بس و لاچارنظر آ رہی ہے ۔ بازاروں اور مارکیٹوں میں منافع خوروں کا راج قائم ہے جو کھلم کھلا سرکاری احکامات کا مذاق اڑاتے نظر آتے ہیں۔ پھل اور سبزی فروش اس بات کا رونا روتے ہیں کہ ایک تو انہیں منڈی سے مال دگنے ریٹ پر مل رہا ہے اور دوسری طرف ہر طرح کے بھتہ خوروں کو کھلی چھٹی ملی ہوئی ہے جس کے باعث سرکاری نرخوں پر اشیاء کی فروخت ممکن نہیں رہتی۔ بھتہ نہ دیں تو مارکیٹ میں ٹھیلا کھڑا کرنا ممکن نہیں جبکہ مار پیٹ کا سامنا الگ ہوتا ہے۔ پولیس ان کی مدد سے قاصر ہوتی ہے۔ حقیقت تو یہ ہے کہ حکومت کو خود قیمتیں کنٹرول کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں ہوتی اور اس کے تمام اقدامات نیم دلانہ ہی ہوتے ہیں کیونکہ منافع خوروں کی لابیوں کے ساتھ اس کے میل کھاتے سیاسی مفادات منافع خوروں کو کھلی چھوٹ دینے کے پابند ہوتے ہیں۔
رمضان المبارک کی آمد سے پہلے ہی ملک بھر میں مہنگائی میں اضافہ ہو جاتا ہے اور اشیائے خوردونوش کی قیمتیں آسمان سے باتیں کرنے لگتی ہیں ۔ اصولی طور پر رمضان المبارک کی آمد کے ساتھ اشیائے خوردنوش کی قیمتوں میں نمایاں کمی ہونی چاہئے تاکہ اس بابرکت مہینے میں غریب عوام کو ریلیف مل سکے لیکن بدقسمتی سے وطن عزیز پاکستان میں ایسا نہیں ہوتا ہے۔ بجلی، گیس اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اثر کھانے پینے کی اشیاء پر سب سے زیادہ ہوتا ہے۔ اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافے کی وجہ سے کم آمدنی اور تنخواہ دارعوام تشویش میں مبتلا ہو گئے ہیں اور ان کی نظریں نہ چاہتے ہوئے بھی حکومت کی طرف اٹھتی ہیں کہ وہ انہیں مہنگائی کے بم سے بچانے کے لئے کوئی اقدامات کرے۔
پہلا قدم تویہی ہو سکتا ہے کہ اصل منڈی میں قیمتوں پر کنٹرول کیا جائے لیکن دیکھا یہ گیا ہے کہ پرائس کمیٹیاں صرف مارکیٹوں میں چھاپے مار کر چھوٹے خوانچہ فروشوں اور پتھاریداروں کو دکھاوے کا جرمانہ کر کے اپنے فرض سے سبکدوش نظر آتی ہیں لیکن مسئلے کی جڑ کو کاٹنے سے صرف نظر کرتی ہیں۔ فریز کئے ہوئے گلے سڑے فروٹ مہنگے داموں فروخت کا کوئی نوٹس نہیں لیا جاتا۔ اب ایک ہی صورت باقی رہ جاتی ہے کہ عوام ازخود مہنگی اشیاء کا استعمال ترک کر دیں یا کم کر دیں تا کہ منافع خوروں کو قیمتیں کم کرنے پر مجبور کیا جاسکے یا عوام صارفین کمیٹیاں بنا کر بھرپور احتجاج کریں اور بے حس حکومت کو مہنگائی کم کرنے کے لئے نتیجہ خیز اقدامات پر مجبور کریں۔ ایک صورت یہ بھی ہو سکتی ہے کہ صارفین کمیٹیاں سول سوسائٹی اور میڈیا کی مدد سے عدلیہ کا سہارا لیں تا کہ عدلیہ کے احکامات صوبائی سطح پر حکومتوں کو ناجائز منافع خوری کے خلاف موثر اقدامات پر مجبور کر سکیں۔۔۔ اس دیرپا اور سنگین مسئلے کے حل کے لئے آپ بھی اپنے خیالات اور مشاہدات سے آگاہ کریں ۔۔۔! shahzad.janggroup@gmail.com  
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 58 ) احباب کو بھیجئے
 
  ShareThis

   تبصرہ کریں  
  آپ کا نام
  ای میل ایڈریس
شھر کا نام
ملک
  تبصرہ
کوڈ ڈالیں 
  Urdu Keyboard


Najeeb Sandeelo, Dubai............is mehngai ki wajha se mainey pakistan aaney ka program cancel kr diya.
 
najeeb sandeelo Posted on: Sunday, July 29, 2012


Raja Yasir Dubi, Wah Cantt...........hum log khud iss mehengai kay khilaf avyaz nahein uthatey.
 
RAJA YASIR DUBI Posted on: Saturday, July 28, 2012


Ghulam Abbas Khan, Karachi.............salam, ramzan kay mubarak mahany may yay sab dekh kar dukh hota hay.
 
gulam abbas khan Posted on: Saturday, July 28, 2012


Muhammad Tayyab, Sialkot...........Media walo khuda k liye awam ki problems py baat karo aap to aaj kal 1 news tak nai dy rahy loadsheding py main ny apni life main kabi itni loadsheding nai dekhi woh b ramzan k month main. kuda k liye loadsheding py baat karo bijli k wazir sy jawab mango loadsheding ka kam az kam yeh ramzan ka month to sakon sy guzarny do.
 
Muhammad Tayyab Posted on: Saturday, July 28, 2012


محمد عدنان، گوجرانوالہ…آپ کی بات سے اتفاق کروں گا۔ رمضان میں مہنگائی اس قدر زیادہ ہے بازار میں جاکر چیزوں کے ریٹ سنتے ہی دماغ چکرانے لگتا ہے-
 
محمدعدنان Posted on: Thursday, July 26, 2012


خالد جاوید، سعودی عرب…ہم اور ہمارے حکمران صرف نا م کے مسلما ن ہیں، ا گر یہ ہی حا کم چا ہیں تو ایک دن میں ان منا فع خوروں کو کنٹرول کرسکتے ہیں مگر سوال وہ ہی ہے کہ نیچے سے لیکر اوپر تک پورا آوے کا آوا ہی راشی ہو تو گندگی کم ہونے کے بجائے اور عروج پر جائیگی اور یہ جن اپنی جسا مت دن بہ دن بڑھاتا جا رہا ہے ا س میں کس کی نا اہلی ہے جی ہا ں ہما رے حکمرانوں کی اور ان کی منتخب کی ہو ئی ٹیم کی جس میں ہر عہدے دار اپنا اپنا حصہ پہلے فکس کردیتا ہو تو خود اندازہ کریں ا س کے بعد عوام کی چیخ تو نکلنی ہے، مسلما نوں کی جو خو بیا ں ہیں وہ یو رپ والوں نے اپنا لی ہیں جی ہا ں ان کے یہا ں کر سمس میں دیکھ لیں با زاروں میں 50 فیصد قیمتیں کم کردی جا تی ہیں اور ایک ہم ہیں جہا ں پر 200 فیصد قیمتیں بڑھا کر عوام پر ظلم کیا جا تا ہے۔ ظلم، ظلم، بے انتہا ظلم
 
khalid jawed Posted on: Thursday, July 26, 2012


Ali, Sialkot.........ramadan main mehangai arooj per hai ghareeb tabka kia kary ga.
 
ali Posted on: Thursday, July 26, 2012


Muhammad Sheraz Qureshi, Saudi Arabia.........RAMADAN kareem ahsta ahsta apne manzal ke trf rwan dawan ha es mah-e-mubarak ma hr ek ke koshish hote ha ka zayada se zayada nakyan kama la mughr pakistan ke tu baat e na kran ramadan shro hote e mafakhor apne sargarmain shorr kr date han ab yahan ke masal la lan ramadan sa qabl e har cheez market ma wafer mojood hote ha aur hr cheez pr discount hota ha chezan saste ho jate han hr amir gareeb la skta ha maghr pakistan ma tu logon ka jena e mushkl ho gya ha na koe qanoon na koe pochna wala hr trif chor bazari, phar kehtey hain ka pakistan ma mushkalat han yeh ALLAH ke narazge ha.
 
muhammad sheraz qureshi Posted on: Thursday, July 26, 2012


Kamran, Karachi.........kab tak hakomat ko galee dogay kabhee to qaum apnay girebaan mian bhi jankay gee.
 
kamran Posted on: Wednesday, July 25, 2012


Waheed Ali Khan, Karachi.............ALLAH IN LOGO KO HDYAT DA IN LOGO KI WAJA SA HAMARA MULK BARBAD HA KUDHA KI LATHI BA AWAZ HA JB IN LOGO PR PRHA GI IN KO SMJH AA JAYE GI BUS KUDHA SB KO HADYAT DE.
 
waheed ali khan Posted on: Wednesday, July 25, 2012


Shazia Masood, London..........Humarey mulk k hukmaran faida uttah rahe hain to awam kion pechay rahe gi , aam insaan ko mehangai taley daba diya hai to woh awaz uthane ka keyse sochain, sara din, din bar k kharchon ki calculation main guzar detay hain. yeh hukmaran jo barey barey banglows main rehtay hain, , hawelion jase ghar bana rakhey hain AC wali garion main ghoomte hain inhain gharib ki zindagaion ka keyse ahsaas ho sakta hai, jinhon nay kabhi yeh life dekhi hi nahi. humain choti machlian to nazar aati hain lakin bari machlion par koi haath nahi dalta. kya aap kadam uttah sakte hain?
 
shazia masood Posted on: Wednesday, July 25, 2012


Muhammad Shahbaz Sheikh , Lahore............zakheera andozi karnay walay per khuda ki lanat hai.Is tarha ka munafa kamanay walay loghon ki zindgi ko ghor say dekhay to app ko pata chal jai ga ko kis zilat our bagharty waly zindgi guzar rahay hain ALLAH in logon ko hadayat de.
 
Muhammad Shahbaz Sheikh Posted on: Wednesday, July 25, 2012


Furqan, Karachi...........pakistan ki awam ka pehla kam jo he wo khud ko kamzor or mazlom smjhna or har waqt na ummeed rahna jo k ALLAH ko na-passand he or mahangai sirf dekhne k lie he baki ap khud note kr skte hain k ager ksi chiz ki qemat ziada he to wo bik b rahi he or log hansi khushi le rhe hain ager ap aj kal me koi market visit krnge to rush dekh k andaza laga len k gareeb awam kharid hi rai he humari kamzori na ummeedi or dosre muslman bhai ka khyal na huna humari khud garzi he jis ki waja se hum pasti ki taraf ja rahe hain.
 
furqan Posted on: Wednesday, July 25, 2012


مخلص راہی، کراچی…رمضان کے مہینے میں مہنگائی کے ذمہ دارحکومت و منافع خوروں کے ساتھ ساتھ ہم روزہ دار مسلمان بھائی بھی ہیں۔ روزہ کیا رکھ لیا بہت بڑا احسان کیا اللہ پر۔ روزہ رکھ کر کھانے پینے کی چیزوں پر ایسے ٹوٹ پڑتے ہیں اس طرح قدرتی آفات کے مارے ہوئے مصیبت ذدہ بھی بے صبری کا مظاہرہ نہیں کرتے۔ بھائی ذرا صبر کر جائیں کھانے پینے میں، صرف چند دن خود بخود چیزیں اپنی سطح پر آجائیں گی۔
 
Mukhlis Rahi Posted on: Tuesday, July 24, 2012


Javed Iqbal Malik, Chakwal..........yahan sb bad-unwan akhttay ho gaey hain, jin ko jail mein hona chahiye tha wo hum per hukmrani ker rahay han, aur hum log apnay vote ka sahee istamal nai kertay,
 
javed iqbal malik Posted on: Tuesday, July 24, 2012
Prev | 1 | 2 | 3 | 4 | Next
Page 3 of 4


گورا رنگ ہی کیوں؟
ورلڈ پولیو ڈے
اردوزبان کانفاذ:اہم قومی،آئینی ضرورت
’گو بابا گو‘ سے ’گو وٹو گو‘ تک!!
اب مستحکم فیصلے ہی پاکستانی کرکٹ کو بچاسکتے ہیں
 
قربانی سے پہلے قربانی۔۔۔۔فلم فلاپ!!!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 33 )
ملالہ کیلئے نوبل انعام اور سوشل میڈیا
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 11 )
بے ترتیبی ہی اب ترتیب ہوئی جاتی ہے
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 7 )
صوبائی اسمبلیوں کی پہلے سال کی کارکردگی
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
اردوزبان کانفاذ:اہم قومی،آئینی ضرورت
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
 
 
 
 
Disclamier
 
 
Disclamier
Jang Group of Newspapers
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this
web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited
Privacy Policy