لاگ ان
Login
 ای میل
پاس ورڈ
 
Disclamier


لاؤ ہم خود ہی نشیمن کو جلا دیتے ہیں! Share
……سید شہزاد عالم……
پنجاب کے کئی شہروں میں بدترین لوڈ شیڈنگ کے باعث معمولات زندگی شدید متاثر ہیں۔ موسم گرما اپنے عروج پر ہے اور حکومت کی تمام تر کوتاہی، بدانتظامی ، عدم دلچسپی اور پر لے درجے کی نا اہلی کے باعث بجلی کا بحران اپنے عروج پر پہنچ گیا ہے جس کے باعث اب عوام شدید مایوسی اور اشتعال کے عالم میں سڑکوں پر حکومت کے خلاف مظاہرے کر رہے ہیں اور ملک میں رائج کلچر کے عین مطابق یہ مظاہرے پر تشدد صورت اختیار کر گئے ہیں۔ اب تک کئی قیمتی جانیں ان مظاہروں کے دوران جاں بحق ہو چکی ہیں اور کروڑوں روپے کی نجی اور سرکاری املاک نذر آتش ہو چکی ہیں۔
اس جمہوری دور میں ہم متعدد بار دیکھ چکے ہیں کہ جب بھی عوام اپنے مطالبات لئے سڑکوں پر آتی ہے مرکزی اور صوبائی حکومتیں فوراً ایک دوسرے کی مدد کو پہنچتی ہیں ۔۔ کس طرح؟۔۔۔۔ مرکز میں پی پی کی حکومت اور پنجاب میں ن لیگ کی حکومت ایک دوسرے کے خلاف بیان بازی شروع کر تے ہیں اور ایسے حالات پیدا کرتے ہیں کہ مظاہرے پر تشدد رخ اختیار کرلیں اور پھر انتظامی مشینری کو استعمال کرتے ہوئے عوام کی آواز کو دبا دیا جائے۔ مصیبت کے ماروں کے خلاف ہی مقدمے بن جائیں اور ان ہی کو زندان میں ڈال دیا جائے اور ان کی رہائی کے لئے رشوت کا بازار گرم کردیا جائے یعنی ہر صورت میں عوام کو ہی نچوڑ دیا جائے۔
بجلی کے بحران کے لئے مرکزی حکومت صوبائی حکومت کو اور صوبائی حکومت وفاق کو اس کا ذمہ دار ٹھہراکر عوام کی آنکھوں میں جی بھر کے دھول جھونکتے ہیں۔ عوام کے لئے بجلی اب کوئی اشیائے تعیش نہیں رہی بلکہ اب عوام کے معاش اور روٹی روزی کا انحصار بجلی کی فراہمی سے مشروط ہے۔ بجلی کی عدم فراہمی سے چھوٹے چھوٹے کاروبار تباہ ہو چکے ہیں ، دکانوں اور صنعتوں کو تالے لگ چکے ہیں۔ سب کچھ جانتے بوجھتے ہوئے بھی بجلی کے بحران سے نمٹنے میں حکومت کی عدم دلچسپی سے تو یہی ظاہر ہوتا ہے کہ حکومت نے ملک اور عوام کے مقدر کے لئے اندھیروں کا انتخاب کر لیا ہے ۔ ملک کی معاشی تباہی میں پہلے کون سی کسر باقی تھی کہ اب عوام کے لئے بھی مارو یا مر جاؤ والی صورت پیدا ہوتی جارہی ہے۔ بجٹ گزرے ابھی مہینہ بھی نہیں ہوا کہ بلند و بانگ دعوے ہوا میں تحلیل ہو گئے۔ عوام کو سنہرے سپنے دکھانے والے اب عوام کا گلا گھونٹنے پر لگ گئے ہیں۔ اب تو صورتحال ایسی ہو گئی ہے کہ
کیا ضرورت ہے رفیق برق کو یہ زحمت ہو
لاؤ ہم خود ہی نشیمن کو جلا دیتے ہیں


 
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 34 ) احباب کو بھیجئے
 
  ShareThis

   تبصرہ کریں  
  آپ کا نام
  ای میل ایڈریس
شھر کا نام
ملک
  تبصرہ
کوڈ ڈالیں 
  Urdu Keyboard


Mohammad Bilal Akram , Chichawatni...........awaam theek kar rahi hai jo MPAs ko gharon se nikal k mar rahi hai, aik din ye PM aur aiwan-e-sadar main b ghus jai gi, ab to un ki izzat mehfooz hai phr awam tang aa k in ki izzaton ka b pata ni kia hall krain gay KHUDA k liyay bazz a jao.
 
mohammad bilal akram Posted on: Wednesday, June 27, 2012


حسیب، ملتان…لوڈ شیڈنگ کا واحد حل کالا باغ ڈیم ہے۔
 
HASEEB Posted on: Tuesday, June 26, 2012


Rana Abdul Jabbar , Jauharabad...........iss bohran ki zemadar mojuda government hai. jab se en ki government aye hai kome kaye bohranon oar khasusan electricity ki bad tareen load shedding sy muttaser ho rahee hai. siasatdano ke paas arbon kharbon rupay hain. aor enhon ne corruption se bi khub pase akthe kye hain. agar ye mulk-o-kome ke khair khwah hain to ye apne pas se aor jo corruption ka j pasa aktha kia hua ha, wo sb wapda ke bkaya jaat ada ker dein to at least electricty ka bohran khtam ho sakta hai.
 
Rana Abdul Jabbar Posted on: Tuesday, June 26, 2012


RAJA SHOAIB ADNAN, LAHORE...............SIR BIJLI KA BARTA HUA BUHRAN AWAM KAY DILLUN MAIN AK BARDASHT TORNAY WALA MADA PAYDA KAR RAHA HAI JO K AWAM TOR PHOR KI SHAQAL MAIN NIKAL RAHE HAI SAR KONSA AYSA KAM HAI JO DUNAI MAIN NYE HO SAKTA AGAR ATIFAQ-E-RAI HO SIR YAY TO LALCHE HAIN YAY FAISALAY KARNY NYE AYE BALAKY PAYSAY BTORNAY AYE HAIN MULK LUTNAY AYE HAIN INKA KON SA BANDA AYSA HAI LEADERS MAIN JIS K GAR AC NA HO GENRATOR NA HO SAR YAY LOG KABE UN LOGO K GARUN MAIN JA K DAYKHEN JO DIN RAT MEHNAT KARTY HAIN AUR CHEN KI NEND NYE SO PATY JIN K BUCHAY TARSTAY HAIN GAR MAIN LIT KO AUR (UPS GERNATOR )KO WO PRIVATE EMPLOYEES JIN KO INKI MEHNAT KI UJRAT NYE MILTI KYU WAJA IS FAIL HAKUMAT NAY ECONOMIC CONDITION AUR BUSINESS KO DOBO DIA HAI.
 
RAJA SHOAIB ADNAN Posted on: Monday, June 25, 2012


آصف لطیف، کراچی…میری عوام الناس سے گزارش ہے کہ وہ اپنے احتجاج کو نتیجہ خیر بنائیں صرف سڑکوں پر آ کر شورشرابہ کرنے اور املاک کو نقصان پہچانے سے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔ اپنے اپنے حلقے کے قومی اور صوبائی ممبران کے آفس اور گھروں کا گھراؤ کریں اور دھرنا دے کر بیٹھ جائیں ان سے اپنے مطالبے منوائیں، نہیں تو ان کو اس اپنی نمائندگی کے حق سے دست بردار کر دیں جو آپ نے ان کو ووٹ دے کر دیا تھا، اس طرح چیخ و پکار اور سرکاری و نجی املاک کو نقصان پہنچا کر اور سڑکوں پر فوٹو سیشن کروانے سے مسائل حل نہیں ہونگے، یقین جانیں جب آپ اپنے نمائندوں کو گریبان سے پکڑ کر اپنا حق مانگو گے تو پھر یہ کچھ کریں گے اگر نہ کیا تو اگلی بار ووٹ لینے کی وہی جرات کرے گا جو آپ کے مسائل حل کر سکے گا یا آپ کے جوتے سہہ سکتا ہوگا۔
 
آصف لطیف Posted on: Monday, June 25, 2012


Muhammad Ayoob Mengal , Shikarpur............Tawanai Ka Bohraan Pervaiz Musharaf K Dor-e-Hukumat se Chala Araha he jo Kum Hone k Baje Barhta Hi Chala Jaraha hai ab is ko Syasi Dao Pech Kahen Ya phir Ghalat Planning Bus Awam ko Bad Se Bad Tar Banane ki Kasam Khai He Hukurano Ne Ye Hukumran Ye Tak Nahi Sochte K is Kursi Tak Lane Wale Yahi Awam He Pata nahi Kon Si Purani Dushmani Nibha Rahe Hen Ek Tola Kehta He K Ye Buhran Humen Wirasat Men MIli He HUmara Qasoor Nahi Ek Syasi Tola Apne Ko Chamkane K Liye Or Ane Wale Waqt Men Kursi Par Bethne K Leye Jalao Gherao Ki Schem Chala Raha He Pata Nahi Ye Kyon Nahi Sochte K Nuqsan Apna Hi Horaha.
 
Muhammad Ayoob Mengal Posted on: Saturday, June 23, 2012


Muhammad Faizan , Rawalpindi.......aaj hamara mulk mukhtlif qism k crises main mubtla ha jis ki sb sa bari waja hm khud awam hain.jb tak hm khud ko change nhn karain ga mulk kbi change nhn ho skta.
 
muhammad faizan Posted on: Friday, June 22, 2012


RANA IMRAN, SHEIKHUPURA.............LOADSHADING NA MANZOOR.
 
RANA IMRAN Posted on: Friday, June 22, 2012


Waqar, Lahore........yeh mulk hai khooni inkalab k ilawaa ab koi chara nahi agar koi is inqalab ko lead keray to main apna khoon daynay k liyee tayayar hon kam az kam agay naslain to sakoon se is mulak main rahain ge .in hukmaraoon se nijaat ka sirf 1 hi rasta hai khooni inkalab.
 
waqar Posted on: Thursday, June 21, 2012


Muhammad Irshad kamboh , Gujranwala..........Dunya ke iss kharaab tareen govt. ko ab gareeb awam ke jan chorr deni chahey.
 
Muhammad Irshad kamboh Posted on: Thursday, June 21, 2012


Talha Saroya , Safdarabad..........ye sab daikh kar aur suntay howe humain sharm ati hai k dosry log kiya kehty ho gy liqen hamary siyasat-daano ku nhi ati unain sirf paisay aur seat he ku nazar ati hai plz kuda k wasty mulk k leya socho.
 
talha saroya Posted on: Wednesday, June 20, 2012


Raja Farhan, Saudi Arabia.............ham apny tamam hamwatnoon say guzarish kerty hain k yeh jalao gerao ker k apny hi mulk ka nuqsan khuda ra na karin balky pur-amn ehtjaj karin ap ka huq hy un choron k gher jalain jo mulk ko loot rahy hain but kisi gareeb ka nuqsan na karin or dua karin k is hakoomat say jan chhooty or koi acha sacha insan hakomat main ay {Ammen}
 
raja farhan Posted on: Wednesday, June 20, 2012


Shoaib, Lahore..........Jis Khait sey Dehkaan ko Mayasaar na ho Rozi Uss Khait kay har Khosha -e-gandum ko jala do
 
shoaib Posted on: Wednesday, June 20, 2012


Rana, Khanewal.........Iss k ilawa aur koi surat nazr bhi nahin aati....Abb faisalay roads per hongay.Awam bahir aa chuki hy, golyaan khanay ko tayyar hain. Abb taaj uchalay jainge aur takht giraye jainge.
 
Rana Posted on: Wednesday, June 20, 2012


Ali, Islamabad.......jo bhi karein lekin ho ga kuch nahi or syed yousaf raza gillani ko na ahal karnay say kuch nahi ho ga sadar k khaliaf koi kuch q nahi karta.
 
Ali Posted on: Tuesday, June 19, 2012
Prev | 1 | 2 | 3 | Next
Page 2 of 3


اردو زبان کا نفاذ،ایک اہم قومی و آئینی ضرورت
’گو بابا گو‘ سے ’گو وٹو گو‘ تک!!
اب مستحکم فیصلے ہی پاکستانی کرکٹ کو بچاسکتے ہیں
ہاتھ دھونے کا عالمی دن
ملالہ کیلئے نوبل انعام اور سوشل میڈیا
 
قربانی سے پہلے قربانی۔۔۔۔فلم فلاپ!!!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 33 )
ملالہ کیلئے نوبل انعام اور سوشل میڈیا
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 11 )
بے ترتیبی ہی اب ترتیب ہوئی جاتی ہے
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 7 )
صوبائی اسمبلیوں کی پہلے سال کی کارکردگی
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
اردو زبان کا نفاذ،ایک اہم قومی و آئینی ضرورت
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
 
 
 
 
Disclamier
 
 
Disclamier
Jang Group of Newspapers
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this
web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited
Privacy Policy