لاگ ان
Login
 ای میل
پاس ورڈ
 
Disclamier


بجٹ آ گیا ہے ... بجٹ ا ٓ گیا ہے Share
……فاضل جمیلی……وفاقی وزیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے موجودہ اتحادی حکومت کا پانچواں سالانہ بجٹ پیش کردیا ہے۔ پاکستان کی جمہوری تاریخ میں پانچواں بجٹ پیش کرنے میں کامیاب ہونے والی یہ پہلی حکومت ہے۔ اس لحاظ سے دیکھا جائے تو جمہوری پاکستان کے لیے یقینی طور پر یہ ایک اہم سنگ ِ میل ہے ۔جہاں تک بجٹ میں عوام کوکسی قسم کا ریلیف ملنے کا سوال ہے تو گذشتہ ہر بجٹ کی طرح اس مرتبہ بھی حکومت عوام کو ریلیف دینے میں ناکام رہی ہے۔ بجٹ سے ایک دن قبل البتہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کرکے کسی حد تک عام آدمی کی اشک شوئی کرنے کی کوشش کی گئی ۔بجٹ تقریر کے دوران پہلی مرتبہ اپوزیشن ارکان کی نعرے بازی کے دوران ہاتھا پائی بھی دیکھنے کو ملی ۔جس کی وجہ سے وزیر خزانہ کو اپنی تقریر مختصر کرنا پڑی۔حکومت اور اس کے اتحادیوں کے ساتھ ساتھ اپوزیشن جماعتوں کو بھی اگلے سال عام انتخابات میں جانا ہے ۔لہذا ہر ایک کو عوام الناس کو اپنی اپنی کارکردگی دکھانا ضروری ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ نوازشریف کی مسلم لیگ جو کچھ عرصہ پہلے تک فرینڈلی اپوزیشن بنی ہوئی تھی اب حقیقی اپوزیشن کا کردار ادا کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ اس کے رہنماؤں کے لہجوں میں تلخی بڑھ رہی ہے اور ہر محاذ پر حکومت سے دست و گریبان ہونے کو تیار دکھائی دیتی ہے۔نیوز چینلز کی زبان میں بات کی جائے تو دونوں اطراف کے ارکان ریٹنگ کے چکر میں جمہوری و اخلاقی اور آئینی اقدار کی دھجیاں بکھیر رہے ہیں۔

بجٹ تقریر میں وزیرخزانہ نے یہ نوید بھی سنائی ہے کہ آئی ایم ایف کو سو ارب ڈالر لوٹا دیے گئے ہیں۔بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کی وجہ سے 35 لاکھ خاندانوں کو فائدہ پہنچا۔تنخواہوں اور پنشن میں بیس فیصد ایڈہاک ریلیف دیا جائے گا۔بجٹ میں کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا گیا۔بجلی کے بحران کے خاتمے کے لیے زیادہ سے زیادہ وسائل استعمال کرنے کا وعدہ کیا گیا ہے۔ایک خوشخبری یہ بھی سنائی گئی ہے کہ وزیراعظم ہاؤس کو ایڈوانس اسٹڈیز انسٹی ٹیوٹ میں تبدیل کر دیا جائے گا اور وزیراعظم ایک چھوٹے گھر میں منتقل ہو جائیں گے۔دیکھنا یہ ہے کہ جو بجٹ تجاویز پیش کی گئی ہیں اور جو وعدے کیے ہیں ان پر عملدرآمد کے نتیجے میں عوام الناس کو کسی قسم کا ریلیف میسر آتا ہے کہ نہیں ۔بجلی مہنگی ہو رہی ہے۔ لوڈشیڈنگ کا عذاب الگ سے ہے ۔ بے روزگاری اور مہنگائی ایسے عفریت ہیں جو نوجوان نسل کو مایوسی کی گہری کھائی میں دھکیل رہے ہیں۔ تعلیم کی کوئی ضمانت نہیں ہے۔ غیر ملکی قرضوں پر انحصار کم کرنے اور خود انحصاری کی راہ اپنانے کے لیے کوئی روڈ میپ نہیں دیا گیا ۔حکومت ہو یا اپوزیشن خوش کن نعرے لگا کر اور سہانے خواب دکھا کر الیکشن تو جیت سکتی ہیں لیکن ملک و قوم کی حقیقی نمائندگی کا اعتبار اس وقت تک حاصل نہیں کر سکتیں جب تک عام لوگوں کو تعلیم نہیں ملے گی ۔ روزگار نہیں ملے گااور عزت ِ نفس کے ساتھ زندگی کرنے کا معیار نہ ملے گا۔

بجٹ آ گیا ہے ، بجٹ آگیا ہے ۔۔۔لیے پھر نئی ایک لٹھ آ گیا ہے ۔۔۔کسی کو توقع سے بڑھ کر ملا ہے ۔۔۔کسی کی امیدوں سے گھٹ آ گیا ہے۔  
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 61 ) احباب کو بھیجئے
 
  ShareThis

   تبصرہ کریں  
  آپ کا نام
  ای میل ایڈریس
شھر کا نام
ملک
  تبصرہ
کوڈ ڈالیں 
  Urdu Keyboard


عمر ساحل…ہم حکومت پاکستان کے تہہ دل سے مشکور ہیں (حقیقت خدا جانتا ہے) کہ عوام دوست (جس میں دشمنی کا عنصر غالب ہے) بجٹ پیش کیا گیا. غریب کا حق اسکی دہلیز پر پہنچایا گیا (جیسا کہ پانچ سال سے تواتر سے جاری ہے) میری عوام سے پر زور اپیل ہے کہ آئنده بھی مثالی بجٹ اور ویلفیر (خارج از امکان) حاصل کرنے کے لیے موجوده حکومت کو ووٹ دیں(نتائج کے ذمہ دار آپ خود ہونگے).
 
امران لساهل Posted on: Saturday, June 02, 2012


احمد کلیم، لاہور…بھٹو خاندان نہیں رہا تو موجودہ حکمرانوں نے کب ہمیشہ رہنا ہے، خدا کا خوف کریں۔
 
ahmad kaleem Posted on: Saturday, June 02, 2012


سید وسیم اقبال، کراچی…اگر یہ حکومت یونہی چلتی رہی تو عوام لوڈ شیڈنگ، حکمرانوں کی کرپشن کی وجہ سے خودکشیوں میں مجبور ہوجائیں گے، پاکستان میں تبدیلی کیلئے ہمیں پاکستان تحریک انصاف کو ووٹ دینا چاہیے۔
 
syed waseem Iqbal Posted on: Saturday, June 02, 2012


منصور احمد، کراچی…جب تک عوام ایک ہو کر پارلیمنٹ کے باہر نہ کھڑے ہوجائیں اور حکمرانوں ان کے ایوانوں سے نہ نکال دیں ایسا ہی چلتا رہے گا، کیوں کہ کسی قوم کی حالت اس وقت تک نہیں بدلتی جب تک وہ خوں اپنی حالت نہ بدلنا چاہے۔
 
منصور احمد Posted on: Saturday, June 02, 2012


ایم حسین، لاہور…یہ بجٹ مکمل طور پر حکومت کی ناکامی ہے،اس سے عوام کو کسی قسم کا ریلیف نہیں ملا، نہ ہی لوڈ شیڈنگ کے خاتمے کیلئے کچھ کیا گیا اور نہ ہی تنخواہیں اتنی بڑھائی گئی ہیں کہ عام شخص زندگی باسہولت اور باعزت گزار سکے، ان کو ایڈہاک ریلیف بنیادی تنخواہ میں ضم کردینا چاہیے۔
 
M.Hussain Posted on: Saturday, June 02, 2012


محمد فاروق حیدر، کراچی…بجٹ 2012-13بہت اچھا رہا، خاص طور پر جی ایس ٹی کی شرح تمام اشیاء پر 16فیصد کرکے پاکستانی قوم پر احسان کیا گیا ہے، حکومت کو کم از کم تنخواہ پندرہ ہزار روپے مقرر کردینی چاہیے۔
 
Mohammad Farooq Haider Posted on: Saturday, June 02, 2012


نجیب الرحمن، تونسہ شریف…یہ بجٹ عوام کیلئے سرا سر ناانصافی ہے، اس میں غریب عوام کو کوئی ریلیف نہیں دیا گیا۔
 
Najeeb ul Rehman Posted on: Saturday, June 02, 2012


نقاش، کراچی…نئی نسل کے لیے پاکستان صفر/صفر ہوگیا ہے، ہم مایوس ہوچکے ہیں اور ہمارے حکمران بے حس، انہیں عوام کا کوئی خیال نہیں، یہ چاہتے ہیں کہ وہ جو چاہیں کریں انہیں کوئی نہ روک سکے، یہ حکومت لوگوں کو غلط سمت جانے پر مجبور کر رہی ہے، عوام سے گزارش یہ ہے کہ ان کا یہ دور جیسے تیسے پورا کرلیں اور آئندہ ان لوگوں کو حکومت میں نہ آنے دیا جائے۔
 
Naqash Posted on: Saturday, June 02, 2012


محمد کلیم فاروقی، شکاگو، امریکا…بجٹ پر کيا رائے دي جائے کيونکھ ابھي تو گيلاني صاحب ميرے خيال ميں کم از کم پانچ چھ بجٹ اور بھي پيش کر کے ايسا ريکارڈ قائم کرينگے کھ جو شايد کبھي رھتي دنيا ميں نھ توڑا جا سکے اس لئے ميرا مشورہ ہے کہ گيلاني صاحب جلد از جلد گنيز بک آف ورلڈ رکارڈ سے رجوع کرين کيونکھ زيادہ سے زيادہ بجٹ پيش کرنے کا عالمي ريکاڈ وہ اپني موجودہ ٹرم ميں ھي قائم کر لينگے-
 
ممحمد کليم فاروقي شکاگو Posted on: Saturday, June 02, 2012


مخلص راہی، کراچی…پاکستان کی تاریخ میں یہ واحد آمرانہ جمہوری حکومت ہے جس نے پانچواں بجٹ پیش کر کے پانچویں مرتبہ عوام پر ظلم کرنے کا شرف حاصل کیا ہے۔
 
Mukhlis Rahi Posted on: Saturday, June 02, 2012


اظہر، تھیراج، لاہور…یہ بجٹ حکومت کی کامیابی بھی ہے اور ناکامی بھی۔
 
azhar thiraj Posted on: Friday, June 01, 2012


کامران، کراچی…اگر یہ بجٹ عوام کے حق میں ہوتا تو قوم ان حکمرانوں کو اپنے کاندھوں پر اٹھا لیتی۔
 
kamran Posted on: Friday, June 01, 2012


کامران، کراچی…اگر بجٹ اس سے زیادہ نقصان دہ ہوتا تو بھی یہ عوام انہی لوگوں کو ووٹ دے کر منتخب کرتے، قدرت نے حکمرانوں میں بہت زیادہ ظلم کرنے کی اور اس ملک کے عوام میں اسے برداشت کرنے کی صلاحیت رکھی ہے۔
 
kamran Posted on: Friday, June 01, 2012


رحیم اللہ، دبئی…حکومت کا وقت ختم ہوگیا اب وزیراعظم چھوٹے گھر میں منتقل ہوں گے، مذاق اور منافقت کی بھی کچھ حد ہوتی ہے، دراصل انہیں یقین ہے کہ اب یہ اقتدار میں آئیں گے نہیں اس لیے اگلی حکومت کے وزیراعظم کو یہ ”تحفہ“ دے کر جائیں گے۔
 
RAHIMULLAH Posted on: Friday, June 01, 2012


خالد جاوید، سعودی عرب…جمہوریت، جمہوریت سب چیزوں کے عیب چھپا نے کے لیے ان سیا ستدانوں کے پا س ایک ہی بھا شہ کا ریکا رڈ بجتا رہتا ہے اور وہ جمہوریت ریکا رڈ ہے آپ کسی خامی اور زیا دتی کا ذکر کریں فوراً کہ دیا جا تا ہے کہ ابھی جمہوریت کی ابتدا ہے اگے چل کر سب ٹھیک ہوجائے گا اور ہر بجٹ پر عوام کی چیخیں ہی نکلتی ہیں راحت نہ جا نے کون سی نسل کو میسر آئیگی۔ مہنگائی، بے روزگا ری ہر سا ل اپنا عروج آسمان کی بلندی کو چھو رہی ہیں امیر اور ترقی کررہا ہے اور غریب اپنی عزت نفس کو بچا تے بچاتے زمین میں دفن ہو جا تا ہے بلکہ یہ کہیں کہ روز مرہ کی زندگی میں اسے اتنی مشکلات سے گزرنا پڑتا ہے کہ وہ بے چا رہ چا روں خانے چت ہو کر زمین بوس ہو جا تا ہیں اور یہ اس جمہوریت میں صبح و شا م ہو رہا ہے اب بتا ئیں جمہو ریت اچھی یا آمریت خا ص کر پاکستان جیسے حا لا ت کے مطا بق ویسے روز کیا کم بجلیا ں گرتی ہیں اس عوام پر اب بجٹ کی شکل میں ایک اور خود کش دھما کہ کردیا ہے ا س جمہوریت کی دعوے دار حکومت نے۔
 
khalid jawed Posted on: Friday, June 01, 2012
Prev | 1 | 2 | 3 | 4 | 5 | Next
Page 4 of 5


گورا رنگ ہی کیوں؟
ورلڈ پولیو ڈے
اردوزبان کانفاذ:اہم قومی،آئینی ضرورت
’گو بابا گو‘ سے ’گو وٹو گو‘ تک!!
اب مستحکم فیصلے ہی پاکستانی کرکٹ کو بچاسکتے ہیں
 
قربانی سے پہلے قربانی۔۔۔۔فلم فلاپ!!!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 33 )
ملالہ کیلئے نوبل انعام اور سوشل میڈیا
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 11 )
بے ترتیبی ہی اب ترتیب ہوئی جاتی ہے
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 7 )
صوبائی اسمبلیوں کی پہلے سال کی کارکردگی
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
اردوزبان کانفاذ:اہم قومی،آئینی ضرورت
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
 
 
 
 
Disclamier
 
 
Disclamier
Jang Group of Newspapers
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this
web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited
Privacy Policy