لاگ ان
Login
 ای میل
پاس ورڈ
 
Disclamier


بچے خود کشی کیوں کرنے لگے؟ Share
……شفیق احمد……کس گھر میں بچے نہیں اور کہاں بچوں کو خراب کارکردگی پر ڈانٹا ڈپٹا نہیں جاتا، ماں باپ سے بہتر کسی بچے کا خیرخواہ کوئی اور ہوسکتا ہے؟ہر ماں باپ اپنی اولاد کو خود سے آگے دیکھنا چاہتے ہیں، مگر تمام والدین یہ بات اپنے بچوں کو صحیح طرح سمجھا نہیں پاتے، اس لیے کہ بچوں کی تعلیم و تربیت کی طرح ماں باپ کی تربیت کیلئے ہمارے یہاں کوئی ادارہ جو موجود نہیں، اس کام کیلئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جو شریعت لائے تھے وہی کافی تھی مگر سب اس راہ سے کوسوں دور ہیں، اس حوالے سے اساتذہ بھی اپنی ذمے داریاں مکمل طور پر ادا نہیں کررہے، تعلیم جو مذہبی فریضہ ہے محض تجارت بن گیا ہے اور تجارت کے ساتھ تاجر جو کرتے ہیں وہی طرزسرکاری اور نجی تعلیمی ادار وں کے اساتذہ و انتظامیہ کا تعلیم کے ساتھ ہے۔
اور ہوا یوں کہ ہر نیوز چینل پر ایک بچے کی خود سوزی کو بھرپور کوریج دی گئی، شہ سرخیوں کا حصہ بنایا گیا، کئی دن تک چلایا گیا، نتیجہ، مزید ایک بچے کی خودکشی، اس کے بعد شروعات ہوگئی۔
اس صورت حال میں یہ بات بھی بھلادی گئی کہ ماضی میں عراقی سابق صدرصدام حسین کی پھانسی کی ویڈیو بار بار دکھانے کے نتیجے میں ایک بچے نے اس کی نقل کرتے ہوئے اپنے آپ کو پھانسی لگا لی تھی۔ گھروں میں معصوم بچے ہر بات سے متاثر ہوتے ہیں، وہ وہی کرتے ہیں جو ان کے بڑے کرتے ہیں اور اب ان کے بڑوں میں ’ٹیلی ویژن‘ کا کردار بھی بے حد اہم ہے جسے تقریباً ہر گھر میں بچوں کے حوالے کردیا گیا ہے، بلکہ ایسے بھی گھرانے ہیں جہاں ٹیلی ویژن بچوں کے کمروں میں رکھوا دیا گیا ہے، یہ وقت ہے کہ ماں باپ فیصلہ کریں کہ انہیں کیا دکھانا ہے اور کیا نہیں،چاہے انہیں جتنی بھی دیگر مصروفیات درپیش ہوں۔ اس کے ساتھ میڈیا بھی اپنے لئے اس حوالے سے ضابطہ اخلاق نہ صرف ترتیب دے بلکہ اس پر عمل درآمد بھی یقینی بنانے کیلئے اقدامات اٹھائے۔  
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 93 ) احباب کو بھیجئے
 
  ShareThis

   تبصرہ کریں  
  آپ کا نام
  ای میل ایڈریس
شھر کا نام
ملک
  تبصرہ
کوڈ ڈالیں 
  Urdu Keyboard


Naseem, Karachi........Allah pakstan ko salamat rakhey.
 
naseem Posted on: Saturday, June 02, 2012


Manzoor Ahmad, Spain........Shafeeq saheb ne bhut ache mouzo per likha hai . main ese waldain ke kem shaour ke sath sath media ki bhi bat keronga .duniya key diger akser mamalek main TV per jo programe dekhate hain to un ke sath( age limite) lekha hota hai istera waledain wo program bacho ko nehi dekhney dete.hamesha TV our Computer wagera aisey jaga rekhney chain, jehan ager bachain in ko istemal kerain to waledain in ko dekh sekain
 
Manzoor Ahmad Posted on: Saturday, June 02, 2012


ترک محمد حسین، کراچی…میڈیا ایسی خبریں نظر نہ کرے۔
 
Turk Muhammad Hussain Posted on: Saturday, June 02, 2012


محمد کلیم فاروقی، شکاگو…جس دباؤ سے قوم گزر رہی ہے، اگر کوئی نفسیاتی مریض بننے سے بچ جائے تو بڑی بات ہے اور ایسے نفسیاتی مریض اپنے ذہنی دباؤ کا غبار اپنے سے کمزور پر غصہ کر کے نکالتے ہیں اور بچے بہر حال سب سے کمزور اورآسان ہدف ہیں، اسی لئے بچوں پر تشدد کے واقعات بڑھتے جارہے ہیں چاہے وہ گھر یلو ملازم ہوں، شاگرد یا پھر اولاد اور اس کمزوری کے سبب مایوس بچے اس حد تک چلے جاتے ہیں۔ اللہ رحم فرمائے۔
 
محمد کليم فاروقي شکا گو Posted on: Saturday, June 02, 2012


NAEEM, SYDNEY....ASSALM O ALAYKUM, MAIN SUB SAY PAHLAY AAJ KAY MAAN BAAP KO IS KA ILZAM DOON GAA KYOON KAY NA SCHOOL JAA KAR BACHOON KAY BARAY MAIN PUCHTAY HAIN NAA GHAR PAR TV, MOBIL PHON,, IPOD, INTERNET , VIDEO GAMES OR BACHOON KAY KON SAY DOST HAIN YAA SCHOOL MAIN HAMARAY BACHAY KAY SAATH KOI KIA KAR RAHA HAY OR AB MAIN MEDIA KO BHI KAHUNGA KEH WOH ZIMMADAARI KA MUZHAHIRA KAREY. AAJ KI TECHNOLOGY SAY BACHOON KO BACHAOU FACE BOOK YOUTUBE , MOB PHONE SAY BACHAOU APNAY BACHOON SAY PYAAR KAROU UN KO SURAT KAHAF YAAD KARWAO HAMRAY PYARAY NABI MUHAMMAD SALLAL LAHOU ALAYHAY WASSAL SAY MUHABBAT KI BATAIN KAROU ALLAH TAALA KAY BARAY MAIN ALLLAH TAALA KI MUHABBAT KARAO LOVE YOUR KIDS JAZAKALLAH, ALLAHNIGHAYBAN
 
Naeem Sarwar Posted on: Friday, June 01, 2012


عبدالستار، سعودی عرب…اس میں میڈیا کا بھی قصور ہے۔
 
abdul sattar Posted on: Friday, June 01, 2012


Muhammad Shahzad, Multan..........hakomat kya kar rahi he ye sub kuch akhir kab tak hota rhe ga pakistan mein.
 
MUHMMAD SHAHZAD Posted on: Friday, June 01, 2012


UMAIR MUNAWAR, JHELUM.........BACHON KO SATH BITHA KR NEWS MT SUNAIN
 
UMAIR MUNAWAR Posted on: Friday, June 01, 2012


خالد جاوید، سعودی عرب…بچوں کی تربیت اور ما حول یہ سب والدین کی ذمہ داری بنتی ہے اور دوسرے اسکول کے اسا تذہ کیونکہ گھر کے بعد اسکول کا ما حول اور ٹیچر صاحبا ن کا بچوں کے سا تھ تعلیم کے سا تھ سا تھ اچھا اور خوشگوار ما حول میں بچوں کے ذہنوں کی نشوو نما کرنا، مگر پا کستان میں ایک سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ اساتذہ کی ٹریننگ کا کوئی خا ص ادارہ ہی میسر نہیں ہے یہ ہی وجہ ہے کہ زیا دہ کیس اسکولوں میں تشدد کی وجہ سے ہو تے ہیں اور رہی سہی کسر میڈیا پوری کردیتا ہے خودکشی جیسے منا ظر با ر با ر دکھا کر۔ بچے ایک نعمت ہیں جیسا ما حول ان کو ملے گا وہ اسے ہی اپنائیں گے۔
 
khalid jawed Posted on: Thursday, May 31, 2012


Haseeb Tariq, Bahawalpur.........Aik Bacha 3 din school nahi gaya ustad ne danta tu bache ney khudkushi kar li usatd ke khilaf muqadma darj ho gaya.Mera sawal yeh hai ke kya ustad ko yeh haq hasil nai ke wo bachon se puch sakey????? Goverment se appeal hai ke foran dikhaway ke liye muqadmae bazi na shuru kar diya kare pehle haqiqat dekha kary.media ka role is sari sorat e hal main sab se negitive hai.
 
Haseeb Tariq Posted on: Thursday, May 31, 2012


Rafaqat, England.........hum logon ko kab aqal aye gi, hum kion nahi bachon ko unn kay chanal dekhney detey,khuda k liye abb toh badal ja mere pakistan.
 
rafaqat Posted on: Thursday, May 31, 2012


عظمت الٰہی، کراچی…آج کے دور میں میڈیا کی ہر خبر کی کوریج خوش آئند بات ہے، بچے بہت ہی حساس ذہن کے حامل ہوتے ہیں، کوئی خبر نشر کرنے سے پہلے اس کے اثرات پر بھی نظر ڈال لی جائے تو یقینا ہم اس طرح کے خطرناک نقصان سے بچ سکتے ہیں۔
 
Azmat Elahi Posted on: Thursday, May 31, 2012


عمران منصب، اسلام آباد…میڈیا کا کردار ہمارے معاشرے میں ہر سطح پر بہت بڑھ گیا ہے، اس صورتحال میں پہلی ذمہ داری بچوں کے والدین کی ہے، پھرمیڈیا کو بھی چاہئے کہ ضابطہ اخلاق پرعمل کرے۔
 
imran mansab Posted on: Thursday, May 31, 2012


Javeria, Karachi...........plz media aysi tmam vidios tv per na dikhy jis sy dosry bachy manfi asarat len or aik ghalt faisla karen us ky sath he agar ye dikhana zaroori hy tu aap sath he ye bih batain ky khudkushi haram hy.
 
javeria Posted on: Thursday, May 31, 2012


Mukhlis Rahi, Karachi..............Bachay khud-kushiyan kion karnay lagay ka yeh matlab nahi keh pehlay nahi kartay thay. Yeh sab media ka kamal hai jo ander ki khabar nikal kar samnay lay ata hai.
 
Mukhlis Rahi Posted on: Thursday, May 31, 2012
Prev | 1 | 2 | 3 | 4 | 5 | 6 | 7 | Next
Page 5 of 7


شہیدصائمہ طارق جرات وعظمت کی مثال
جیلوں کی سیکیورٹی سخت کی جائے
پشاور میں قیامت صغریٰ
یہ کیا بات ہوئی، تیل کی قیمتوں کی کمی کے باوجود مہنگائی کا عذاب جوں کا توں
جیو کی خواتین رپورٹرز سے پی ٹی آئی کی مسلسل بدسلوکی
 
عمران خان، ذرا ٹھہریں، نوشتہء دیوار تو پڑھ لیں
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 42 )
پشاور میں قیامت صغریٰ
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 35 )
جیو کی خواتین رپورٹرز سے پی ٹی آئی کی مسلسل بدسلوکی
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 17 )
اور لاش مل گئی!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 13 )
سرکاری کالجوں میں بس اک تعلیم نہیں، باقی تو سب کچھ میسر ہے!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 12 )
 
 
 
 
Disclamier
 
 
Disclamier
Jang Group of Newspapers
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this
web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited
Privacy Policy