لاگ ان
Login
 ای میل
پاس ورڈ
 
Disclamier


نیٹو سپلائی بحالی ۔ آخر معمہ کیا ہے؟ Share
  Posted On Tuesday, May 22, 2012
  ……سید شہزاد عالم……
شکاگو میں نیٹو کانفرنس کے اعلامیہ کے مطابق نیٹوممالک 2013میں افغانستان کی سیکیورٹی مقامی فورسزکے سپردکرنے پررضامندہو گئے جبکہ پاکستان سے سپلائی روٹ جلدازجلدبحال کرنیکامطالبہ کیا گیا ہے۔ پاکستان سلالہ چیک پوسٹ پر نیٹو فورسز کے حملے اور اس کے نتیجے میں ہونے والے جانی نقصانات پر معافی اور معاوضہ کے مطالبے پر قائم ہے جبکہ امریکہ اس سے انکاری ہے، جس کے نتیجے میں دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں سرد مہری آ گئی ہے۔ پاکستان کی جانب سے تاحال نیٹو سپلائی کا راستہ بند ہے۔
یہ بات صاف عیاں ہے کہ پاکستان کی سیاسی قیادت سپلائی روٹ کھولنے کے حق میں ہے اور اس کی بندش سے پیدا ہونے والے مضمرات سے پوری طرح آگاہ ہے جبکہ پاکستان کے دوست ممالک بھی پاکستان کو یہی مشورہ دے رہے ہیں کہ وقت ضائع کئے بغیر اس سپلائی کو بحال کر دیا جائے اور اپنی معاشی اور اقتصادی صورتحال کو بہتر کرنے پر توجہ دی جائے لیکن اب تک تو یہی نظر آتا ہے کہ حکومت اور اپوزیشن جماعتیں اس اہم ترین معاملے پر باہمی تقسیم کا شکار ہیں اور سیاسی پوائنٹ اسکورنگ پر ان کا زور زیادہ ہے۔ عسکری حلقے بھی ان تمام مضمرات سے بخوبی آگاہ دکھائی دیتے ہیں تاہم جیسا کہ پہلے عرض کیا کہ معافی کا معاملہ ہی بظاہر رکاوٹ بن رہا ہے۔ اگر یہ اور دیگر معاملاتبخوبی حل نہیں ہو پاتے تو پاکستان کے لئے کئی خطرات منہ کھولے کھڑے ہیں مثلاً
۱۔ دہشت گردوں کا پیچھا کرنے کے بہانے سلالہ پوسٹ جیسے واقعات دہرائے جاسکتے ہیں، اور الٹا الزام بھی پاکستانی فورسز پر عائد کیا جائے گا۔
۲۔ پاکستانی فورسز پر بلوچستان میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے الزمات عائد کرکے بھرپور مہم چلائی جا سکتی ہے۔ جس کے لئے امریکہ میں ہوم ورک تیار ہے۔
۴۔ معاشی طور پر پاکستان کو جھکانے کے لئے بین الاقوامی پابندیاں بھی عائد کی جاسکتی ہیں۔
۵۔ حافظ سعید اور ممبئی واقعات کا بہانہبنا کر پاکستان کی مشرقی سرحدوں پر خطرات بڑھائے جا سکتے ہیں۔
دنیا ہمارے بارے میں کیا اور کیسا سوچ رہی ہے؟۔۔۔ کیا ہمارے قائدین ان تمام خطرات سے بے نیاز ہو کر اپنی موج مستی میں گم ہیں؟۔۔۔۔ عوام کو ان خطرات سے کیوں آگاہ نہیں کیا جارہا ہے؟۔۔۔ ہم بحیثیت قوم کیوں ان خطرات کے خلاف متحد نہیں ہو پارہے ہیں؟۔۔۔۔ نیٹو سپلائی بحال کی جائے یا نہ کی جائے ۔۔۔۔۔آپ بھی اس اہم ترین معاملے میں تبصرہ کر کے بحث میں شامل ہو سکتے ہیں۔
 
تبصرہ کریں     ا حباب کو بھیجئے  | تبصرے  (165)     

   تبصرہ کریں  
  آپ کا نام
  ای میل ایڈریس
شھر کا نام
ملک
  تبصرہ
کوڈ ڈالیں 
  Urdu Keyboard

کریم، ڈی جی خان…نیٹو سپلائی بحال کرنے کی کوئی ضرورت نہیں۔
 
kareem Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Sara, Peshawar.......main belkul is favor ,main nhi hu NATO supply bahal nhi honi chahye kabhi b ..chahy kuch b ho"ham agr dubaingey tum ko b lay dobaengay sanam"
 
sara Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Shoukat Khan Alyani, DG Khan.......nato supply aik shart pe khulani chahye drone attack bilkul band hone chahye.....ye alfaz do tok keh dyna chahye.
 
shoukat khan alyani Posted on: Tuesday, May 22, 2012

اختر علی، حافظ آباد…امریکا پاکستان کا سراسر دشمن ہے۔
 
akhtar ali Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Umar Ikram, Lahore.........Nato supply Pakistan ko open karni he hai, uske beghair Pakistan ki Govt ka guzara nai, Pakistan kabhi America ki ankhon mein ankhein daal k bat nai kar sakta.
 
Umar Ikram Posted on: Tuesday, May 22, 2012

رفاقت علی رانجھا، منڈی بہاؤالدین…اس کی کوئی گارنٹی ہے کہ نیٹو سپلائی بحال ہونے کے بعد دھمکیاں نہیں دی جائیں گی۔
 
Rafaqat Ali Ranjha Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Waqas, Sahiwal.......sb say pehly hmari khud mukhtari hai. Jb wo hamari khud mukhtari aor salaamti ka eihtram hi nhein karty to hmen bhe aesy iqdamaat krny chahean k unhn ihsaas Ho.. Aor jahan tk baat h pak k khLaf propegnda ke..to krty rhn.. Ye to unke aadt ha..plz be a nation
 
waqas Posted on: Tuesday, May 22, 2012

عین الدین خان، اسلام آباد…حکومت کو ملک کے وسیع تر مفاد میں نیٹو سپلائی بحال کردینی چاہئے کیونکہ پاکستان کسی بھی قسم کی پابندیاں برداشت نہیں کرسکتا، حکومت، اپوزیشن اور ساتھ ساتھ مذہبی جماعتوں کو پارٹی مفاد سے بالا تر ہوکر ملک کے بہتر مفاد میں اقدامات کرنے چاہئیں۔
 
AINUDDIN KHAN Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Fida Hussain, Quetta.......nato supply zaroor bahal karein ye pak ke apnai mafad mai hain. 50 mumalik se ap dushmani mol nahi lesaktay. ye hamarai political parties tu apni syasi dukan chmka rahai hai in ko awam ke koe fikr nahi in sub k pas tu dual nationality hai ye tu jayingai dosrai mulk hum gharib awam ka kia hoga.agr nato supply bahal na ke tu in k elawa or b bohat nuqsanat ho sakta hai agr pak ko bachana hai tu nato supply bahal karni ho gee.
 
fida hussain Posted on: Tuesday, May 22, 2012

REHAN, MULTAN........NATO SUPPLY BAHAL NAHI HONI CHAYA Q KA USA HAMARA MUFAD MA NAHI HA.
 
REHAN Posted on: Tuesday, May 22, 2012

حکیم، کراچی…پاکستان کو اپنے موقف پر ڈٹ جانا چاہئے، اگرامریکا حملے کی دھمکی دے رہا ہے تو ہم بھی جان کا نذرانہ دینے کو تیار ہیں۔
 
hakeem Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Rafaqat, Islamabad..........hum ko kabi be america ko apny androni mamlat ma dakhal andazi karny nai dana chay. hum ak khudmukhtar mulk hain hum ko apny fasly khud karny chay.. or nato supply bahal karna Dollars ka lia apni awam ko gulami ma dalny k mutradif ha.
 
rafaqat Posted on: Tuesday, May 22, 2012

محمد عالمگیر خان، مردان…اگر نیٹو سپلائی کی بحالی ملک کے مفاد میں ہے تو حکومت کو سپلائی بحال کردینی چاہئے۔
 
محمد عالمكير خان Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Asfandayaz, Swabi.........jab tak ye dunya hay neto supply band ho ga
 
asfandayaz Posted on: Tuesday, May 22, 2012

Gardezi Syed, Rawalpindi........meray khayal ma pakistani politician ko muthad hona chaya or us k baad awaam ko b sari haqiqat batani chaya.. nato route kholnay se b pakistan ko nuksan ho ga or na kholnay se b nuksan he hoga.. pakistan nay is jang k start se nato ko route diya but pir b nato khush nae hoe or nato ko takriban free route tha yeh pakistan se pakistan nay apny air bases diya lakin pir b pakistan k baray ma galat view peesh kia gya hey. mein samjhta hon yeh cheez nato nay kerni hey hen chaya pakistan nato supply bahal ker b day .. is se behtar hey in ki supply band he rehni chaya.
 
Gardezi Syed Posted on: Tuesday, May 22, 2012
Prev | 1 | 2 | 3 | 4 | 5 | 6 | 7 | 8 | 9 | 10 | 11 | Next
Page 11 of 11


انقلاب کا جھانسہ اورسادہ لوح عوام
’دشمن مرے تے خوشی نہ کریے سجناں وی مر جانا‘
گورا رنگ ہی کیوں؟
ورلڈ پولیو ڈے
ایبولا جان لیوا مرض
 
قربانی سے پہلے قربانی۔۔۔۔فلم فلاپ!!!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 34 )
ملالہ کیلئے نوبل انعام اور سوشل میڈیا
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 12 )
بے ترتیبی ہی اب ترتیب ہوئی جاتی ہے
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 7 )
اردوزبان کانفاذ:اہم قومی،آئینی ضرورت
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 7 )
’گو بابا گو‘ سے ’گو وٹو گو‘ تک!!
تبصرہ کریں  تبصرے  ( 5 )
 
 
 
 
Disclamier
 
 
Disclamier
Jang Group of Newspapers
All rights reserved. Reproduction or misrepresentation of material available on this
web site in any form is infringement of copyright and is strictly prohibited
Privacy Policy